ھتاس

مصیی یا ا اس ا ای 2 موا نا مھ سراح رضوی

نار 7 ٠...‏ اوا رو وع کا سی اشاعث -ك7-+ ".8 طباعت و ا ا لا ا و اھ ۳۰۰۲ء تعرار ا ا ا ا ا ا ا ا ایگ ہزارء(1000)

ادارٗ تحقیقات اہنت زار شریف حضرت کو رج الشدتعا یٰ علی۔ کہ امت پراٹی نکی منڑی

کت وہ فیضان مدیندہبری منڑی

تہ رضوےآرام با کرای

فیاء القرآن بل یکشنز سخ روڑ زا ہور

ضیاء الد بین بل یکیشنز شبی رسچ دکھارادر

مل مکتابوی سی جنش روڈ ا ہور

30 . : گر پرادرز اردو پازار لاہور

٢۲ ٢

1

کک یں پاپ ر؟عگرگوگو*و*و*

اباب

لع

ار ظا

پش شلکغتار

بے مجر کا تپتر (ے) فرتوں یں بٹ جانا جنت پا ہنم میں چان کا اصل سب بکیا ے؟ اعوال سای وزخل جن تکا شنی سب ہرگ زیں۔ ای صا لیکو یما نکیل ےکوی مقر رکرن غلط ے۔ ایا ن کا دارددا رک بات ہے؟

بر( ے) فرتوں کے ہنی ہون ےکی وکیا ے؟ عبت رسو لپن کا رانک بات ہے؟ تنم ر ترک یان

1 لگ کا ہرہرمعالے میں ادب لازم ے۔

آپ ے ایپ واترام رش رآ نگرمم) ےکی زی

دوضریی دیتل تیسری ربیل ھی یل

انچو یی دی چھٹی ربیل

اشن ری 1 نوس ول

ار ٦َ‏ از 10 لزا ۵ 1٦۵‏ ٦‏

٦٦

۳٣ ۳۴ ۳۵ ۳ م۳‎ ۲۸ ۳۹ 72 ۳ ۳م‎ 1ک‎ ۴٦ ےَ"‎

نون نل مگیارہو یں نین با ربیل 2

تورسید عال مکو بھائی سے دالوں کا اتندلالل اورمصن فک ترکی بتک جواب (عاۓ)

ترب ول و

چو عو بل -

درو یل 2

سعابومیں دلیل

سنوی دلیل

اٹھا رو یل ۲2

کت

2.۳۲

نب کے لجا ےنم

امام فوو کی تضرح

حضرت تن عبداٹن میٹ (علو یکی تص رح

علا مہ بدرالمد بین مھئ یکی تصرح

امہ عل لدع صمکئی تن کی رع

امام مج رمسقلا ی کی صرح

حخرت عا نعنی ری اللہ حن ہکا طوا فکعبہ ے اپ ار

آ بک کے دروازے پرصحاب کرام ناخنوں سے دنک رج ھھے۔ تیم رسو لک انی مثال

و ےنگ کی طرف مضسوب ہر کا ادب ا2ا لازم سے مرن رم سے ا

رآ نکریم ے دوسرا استرلال

ے اے

کے ۲ے ٢ے‏ ۵ے ۵ے ۵ے ۵ے ۵ے ےے کے ۸ے ۹ے

۹ے

۵۳

۲ھ ۵۵ ۵۲ ے۵ ۵8۸ ۵۹ ٦‏ ا٦‏

٦ ۳ ٣ ٦٢ ٦ے‎ ۸ 19۹ مہے‎ اے‎ ۲

ےے

و رق ق ک6 9ای ۹997 پا

حضرت ابل الد کے عرارات اور النا 07ا سار کت نضرت امام ال۲ کک ایب

رت امام ہفار یکا ادب

قسطرا کی کا ارشاد

۱ در عد یث سے وورا کس یکسا بھ نت قیا مکرنا جائ زئیں

اس پرہادکیوں ہوا؟

اکا واقی پار پا رکیول ہرایاگیا ے؟

دن ص تق اہ یکا کی ایک این موزعیار تک ا یمان افروز رة صیاب کرام نے عیلن نماز میں حضورسید عالم کل ینیم اداکی صا کرام حالت نماز بی می دیدار سو لَِلّه یو کن ہے تی قبلہ می ںکیا حم ت گا ؟

تضورسیر الم لگ کے و نے برنما زچچوڑ دینا واجب ے

علا نٹ یکی تر

قضی مغ اللہ بالی پچ رحمۃ ال علی کی تر

یع ا می ناب رسول الیل کیا نہ قا مکرنا

ملا مہ وو یک

لام ینان )یک 7

علا میٹ یک نو

لا قسطا لی کی نج

صحابگرام ا وع من امن جا کی نے وک ےپ ضرا میرثت رعلو یکا ارشاد

حضرت امام غزال یکا فرمالن

مختیانع وک بن دکیا غ کی دی گے؟

علا مہ خفا گ یک ایمان اذروزۃ 2ہہ؟

تضور علی الصلو ‏ السلا مک یلیم سے تھماتوکی صاح بکا انکر

سپ پ با ایا پاڈ 9410 9جہوا۹.٠‏ کے ا

۸۱ ۸۳۲ ۸۳ ۸۳۲۳۴ ۸۳ ۸۵ ۸۵ ۸۸

ے۹

۹99۹

۸'۳ ۷۳ م۲۳ ۳ انل م٢‏ م۲۲ م۲۲ ۵ا

۷٦

ےاا

ےا ےا

۲۸

ےے

۸ے ۹ے ۸۰ ۸ ۸۲ ۸۳ ۸۲ ۸۵ ۸٦‏ ے۸ ۸۸ ۸۹ ۹۰

۹ ۹۲ ۹۳ ۹۳ ۹0۵ 31 ے۹

۹۸

ای ےی صاح ب کا نظ قا مکرنا

کاب ین د نود کے فخز دی ککاف کی ت لم م کوک قباح تین ایمان دار اور بے ایما نکی خرالی تمرریف

ور علیہ السلا مکا فمرمان خیب نشان ٍ

اکا بر ین اسلام ےنت کا کات ایام دے؟ تھانکی صاحب اپنی با تک زہ ٹل

عررم تی

اتھ باند۔کرتتظیا قیا مکرنا تر کنہیں

ات باند ھکلفظہہا قیا مکرنا خدا کے لئ تا کین

زائر روضہ رسول گج بوقت حا ضر نشل از قیا مککرے ھرائین قاط“ نا یکا بکی لت متحکہخ زعبارات اور ان کے جوابات

یت

لے یکھڑی

انمت زاضات و جوابا کا علبلہ

پہلا اعھترائ ںیم غیب پھ

سم فی بکانئی میس پہلا اتتدلال

روہ ااءترلال

تیسرا استدلال

وڑھا انترلال

پانواں اترلال

مصن فکی طرف ےمم غی بک فی جس چٹ اتد لا لک یادد انی سلسل جوابات

ایک الزائی جواب

منرت کا پہلا اختراش اورااں کےق تیم غیب پنفل یکلام

۹ ۹ ۳ ا١‎ ١ 7 ۲۳ ۵ ٦ ٦ ۰ر‎ ۳١ ۳١ را‎ کا‎ ۳۳ ۳۴۳ ہو‎ 16 کر‎ ۳۳ ۳۳٣ ۳۵ سا‎

۳۴

۳

۳ سنا م۲ ۵" ۷٦‏ ےا ۸

۹

٢١ ۲۳

کر

٭ ہت رر ن گرم ے دلال

کی دیتل

دوس دل

ری دبیل

چپھی ویل

انچ یی دیل

ھی رلیل

سان یں دیل

1 ٹھویں 05

مصن فکا ایک داد بندیی مواوی کے ساتحعد مال مہ ویں کل

صسویں 92

ممیارہویی دییل

پروی دنحل

تجرہ ور یل ک۳

بن ا ضف

رر یل ض

سواہو سی و

ححفرات ابل اول کیل اشبات علم غیب بی دال

پہلا اتدلال

وہر اخرلال

قسراامترلال

وا ا تدلال

باواں اترلال

صلم خی بک بت اعادی ٹگا روا مل

۴۲ ۴۳ م۴۳ ۴۳" ۴۴ ۷ ےٗ' ع ۹ ۲ ٥۵۰‏ ۵۱ ۲ ۳ ۴ ۵۳ ۵۳ ۵ ے۵ ۸ ۹

١۳

۳ ۳١ ۲۳ 0 ۳٣۳

۵ ۳٦ ٢ ۳۸ گت‎ ۳۴

۱

۳“ ۳" ۷ز

۵ "8

ےھ

جھ یھ ہو چکا اور چو ہو نے وااا تھا جخور علے الام کا ری

دور عدیث

تیسریی عدیث

0

اچ بی عدیٹ

کی وک

سالایل عدیث

مگر.. بث فر ‏ کی جردینا

آ ٹوس عدیٹ

قادیانی فرتے کی ردیا

ول عدیث

یل عد مث

مضور علیہ السلا مکوتمام جتیوں اور تام نمیو ں اعم سے _ گیار ہیں عدیث

1 خی پنتی کا لم

باہو یل عد مث

اسائیل رعلوبی کا ایک ایمان سو زعقیرہ

جرگ عدیث

ای کب یکی تردینا

چ مو یل عد مث

کوا نکہاں مر ےگا

خثرات ابل الد پھیٹ کے ان رکا عا لگھیا جات ہیں رت الوبگرصد لق نے پیٹ (تّل) کا عال تایا

٦۸

٢۸

ےےا ۹ے

۹ ےا

ا٦ا‎ ٢۳ ۲۳ لان‎ رھ‎ ٦ ٦ے‎ ۲۸

اےا

۲ےا ٣ے‏ ۳ےا ۵ےا ٦ےا‏ ےےا ۸ے

۹ ےا

۸۱

۸)۳

مترہو یل عدیث

برک عال اور دول کے اعم لک خردیا اھار ہو بل عدیث

اس ول عدیث

ازکی

یسوی عدیث

رو مم کا مشاہرہ فرمانا آیسوس عریگ

ایس یی عد یٹ

صرزین شام برموجو شک اسلام کے احوال بتانا

تو یں حدریث

چو سو یں صدیث

یں عدیث

زین و سا نکی ہر کا 1 ب پگ برمککشف ہونا حضرت ملا علی تمار کی تصرح

ححضرت تی عبرای وٹ عو یکی نص ربوات

یل نڑٹھوی کا حطرت جم کی طرف وٹ مضفسو بکرنا

مت ضکی پیٹ یکردہعکم خی بکیانٹی یل دوسرکی آ یت اور ا ںکا جواب

تیسریی آ یت اور ال کا جو اب چی1 بہت اور ا ںکا جواب قر نکر مکی آیات مم سکون مل خی بکی فی فرمائ یگئی سے ؟

محلم خی بکیانفی میں تا مکردہ پانچووں اتا اور ا کا جواب

مقر کا پا نچواں اعتراض خودا یکپ دبال جا ے۔

۸

۸ ۸۳ ۸۳ ۸۲ ۸۳۴ ۸۲۳۴ ۸٦‏ ۸ ے۸ ك۸ ے۸ ۸۸۸ ۸۸۸ ۸۹ ۸۹ ۸۹

۰ ۹۳ ۹۵ ۰. ۹۸

٢۱

٢۲۳٣

۸۳ ۸۲۴ ۸۵ ۸٦ ء۸‎ ۸۸

۸۹

۹۱ا ۹۳ ۳“ ا ۹۵ ٦‏ ے۹ ۹۸ ۹

٢۰ ۲۲ ۴۳ ۲ ۳۵ ۲٦

۲ُ

]:

صن ایک اوزاممترائش اورالں کا جواب خر ہے ے ای تین کے سا تن کا کال

تھان کی صاح بک نے وی نآ مینر عبارت اور ا ںکا ایمان افروز تقا تب

مفتتیان دی بن رکا تھانوبی صاحب پ رکف رکا فنيٰ خودتمانوی صاح ب کا این او یرکف رکا نویٰ

تن دلو بن دکی تضا رحققات

کیا تھانوٹی صاح بک عبارت نون آمین رجیں؟ اخمام ےت

لیس ملعون سپ عم مضورسیر والم تل سے زائکد بتانا

ھراین تقاط“ نان یکتتاب ک ےکفری عقام کا ایمان افروز رڈٹخ

پیردلوبندے نے د لک بات چان لی تھانوی صاح بک فويٗ اس ایل رعلوی کا فویی

نانوی صاحب کے عقیرت من دکیلئے عمش شک اکشف خابہ تکرنا

تضورسیر الگ کی ٹفن لکی انا

مل مک الگ درس دلو ہت من

ضات ان یک بث ٢۶۳ء00‏ اشجھا روفا ت تم ء2

اشتھار”نوفات تح ال٥“‏ سے ادیاضی تکو فاندہ

نانو نکی صاح ب کا عقید تشخ نوت ے اعلان اناوت قادبانو ںک طرف سے نان وی صاح بکی سام ںگمزاری نوفا کا یق معن ی کیا ے؟

رشن کے نت ا ضا تک تد کے لاب نیم اتیل دلو کا حضور مال م می ہجھوٹ با ندعنا

۲۰۳۴

۴ ۲ 2 ۲۳ ۳ ۲۵ 2 ۲٢ ۲۲۳۴ ۲۳۲ ۴۳۳٣ ۲۳۳۴ ۲۳۳۴ ۲۳ ۲۳ ۲9 ۲۳۹ ۲۰ ۲" ۲۲ ۲۳ ۲ ۲۸

۲۹

۲٢٢ ۲ ۲۲

۳

۲۲۳۴ ۵ ٦ ٢اے‎ ۲۰۸ ۹ ۲٢ ۲٢ ۲۲۲

۲۲۳

۲۲۳۲

۲

۲٦

۲۲

۲۲۸ ۲۹

۲٣ ۲۳

۲۰

سج زولوازمات رساات میں سے سے اہنت کا عقیرہ رسالت باقی تو مججزا تکھی بائی میں

تضورنڈیگ رعت ہیں اور رح تکا زندہ ہہونا ضرورکی سے حیات الان میا ہم السلا مکا خھموت ولا بندیی لٹر کر سے

ہلا ہبوت

ہریراں وت

اٹھار ہوال تُوت

عقیدر نل ملق روتذا رکقہیرے

٢۲۰

”المھند“نائ یناب میں معخرات دلو بند نے ا نہب کےخلاف بقاو کیو ںگی؟ ٦٢٢‏

۲۲ ۲٢۴‏ ۲۸ ۲۹ ۲٣‏ ۲٢‏ ۲ ۲۳۴۳ اك گا ۲ ۲۸ ۳۰ ۲۵۱ ۳۲ ۳۳ ۳۳۴ ۵ لے

مصن ف کا تصرہ

قیرے اور وا کا وریز لصام ْ

گنکوہی صاح بکا قبر عیاور بی نکر بیٹھنا اور اساشییل دعلوی کا فيی گنکگوہی صاحب خوداپتی بی با تک زہ ٹل تمانوبی صاحب اسئیل وعلوىی کے فے ےکی زو میں واتۓ او رکقیر ےکا ایل اورتصادم

دیو بندییں کے پ رکا مض لکخال یکرنا

پہلا وائے

دہرا وائے

تمراوائع

مضن کا تھرہ

عداوت رسول می اکب بین دلو بن دکی انا

ایک الرای جواب

مشک لق شا ی اور عاجت ردائی کا وھ وائحے

خقیرے اور واج یں ایک اور لناوت

مش لکنا یک پانواں وائے

تقویت الا یما ن کا فی

تھاندی صا ب کا فی

حاضر ناظرکی بٹ

و ری پٹ

رآ نکری مکی ای کآیت سے سرکار دو عا ره کے تیرہ(۱۳) اوصاف و الا تکا بان اقامی

معن فا اختزاف

اءك٢‏ ا٢‏ ا١ك٢‏ اك ۴۳۔۲ 0 ۲۲۵ ٦‏ ك۲ ۲۴۸ ۲۴۸ ۲9 ۲۳ٌٔ۲٣‏ ۵

۰و۲

۲

دور حاضر یس پرطرف بد نرویت کا دور وورہ جےکوئی شمرکوی مت قکوکی مل ہبھی ایا یں ہا زں بد نحہہب عناصر ہے موم عزائم ورای نا کے فرورغ کیلئے سرک رع مل میں ٹرصرف نی جج یکاوں رووا کے ورس بلل۔ ماد دن اعلاغ کے مق یں نام برکھی 22 بروان ڑھا با جار ہا سے ماشی میں بد اعنقاد یکونہایت ہی عیارکی اود مکاری سے پچیلا گیا اور دور حاضر میں بھی نہ داعیا نممراہی اپنے اکابری نکی مچوڑکی ہہوئی عیاری اود فریب سے تُھ تقا تک تن بڑسی عرقی ریز یکیساتھ ہمہ وق کر نے میں مصروف ہیں آ ج بھی ا نکی ودی منصوبہ بندگی سے جھ ماضمی می تھی برلویک وی ق ران دریں حدیث اور و چہاد کے نام رش طرع مای میں اولیاء اللد اود اخمیام ۓےکرا مک ناب می لمگمتاخیا ںکرتے تےآ بھی حضرات ایل الل کی بارگاہ میس خو بتنفقی سکر رہےحخرات ائل ائل کی جناٹ میں گستاخیوں اور ہے ادیو ںول ح تار دے رے ہیں ا نگمراہگروں ۳ھ ے اوردے رے میں جوحترات ائل ال دکی جتاٹ میں ز با نکو ہے لگا مکردنے ہہ مرو یئ دالگ کی آڑ کیک اور اسلائی علیہ ایا رک کے ہے شا رلوگو ںکوص را طاچی مکی طرف روال دوا کچ ہی ںآ ایس اع رکی اشدضرورت ےک ایل علم وواْش اپ ےظلم اورفرسے کے ذر بین ان کےکردہ چ رو نکو لے نا کر نے اضائتن ذمہ داری کا حموت دس بصورت دمکر لوک ان شیطالیٰ صف ت مزا ہکن عناص رکیمعگرادی کی زو می کر صرای صتخم سے روگردالیٰ ایا کرت رہگ زن نظ کاب :البغا زا ان وقتتف سی :اون اشن مہو ہے نر صرف حعرات ائل ال کےممتاخون کے لے ایک کوار ے میا نکی ضا کی سے بلمہ فقنہ بدمدمیت افو فت خر ی تکہ بڑ حت ہز سا کے کی یت کسی شی اق کنا یس نف ای ناک بے انائی ذمہ دای اود ول انداز میس تصرف ق رآ نکرم احادیت طیبہ اقوال آم کو ئ کیا کہ ور ملین اوز اکے اکاب ری ن کی کتابوں سے بھی استندلال فر کر ال کے مقائڈ اعمال کے

درمیان منافتقانہ نا دک وآ شکارا ٹر مایا مصنف جز تعن :لٹا “ضٴ ان تا منصوصیت کوجمع فرماا کہ جن سکی دور حاضر ٹیل تقا ری نکرا مکوتلائش ہے مز یل یہ کے اکاجر بن اہنت نے ا ا پہ تارب زلم فر کر تصرف اہے اخنا رکا انظہارفر مایا بللہ ا سکتا بکو ہرمسلمان کے مگ کی ضرور بھی قراردیا۔ ۰

ادار تحقیقات اہلسیدت مصنف کا انچاگی مور ےکہ ادارے کے اننائی اصرار بر مصنف 7 ۹ پ ۶ ۶)ً"+99پ)و' 9“ 99" طباعت د اشاعت کے جمل تقو قبھی اوار ےکوتفو یٹ کیہ اگ چہ ال یکنا بکو بہت بطلے منظر عام پآ جانا جائے تھا لن اس تاج رکی چند وج با ٹگھیں جس میں ایک وج مصنف کے ملک سے باہرتشرلف نے جانا تھا اور دوسرکی وجوجات اس کے علادہ ہی ں قرب کہ

کے موی جات 9 اث میق

پا ات ےی تاب ادارہ اس امیر پر ارت نکرا مکی مدمت میں ین کرد ہا سے کے اس کا بکوعلی وعواہی علتوں پذ مرائی حاصل وی اور برادران اہلسدت اپٹی ذمہ داری مس و ںکرتے ہو ال لکنا بکوعا مکرنے شی پرضکرن ذ دہ بد ئے از لاکی گے ای ںکتب می ناشن بے بل انت ا نات کا تصرف تن و مد یٹک رد من ول جات دیا گیا سے پر یذاشین کےلٹرپچر سے استدرلا لکر کے فی نکو دنا نن جوا ببھی عرحمت فر مایا ید م ہکرت رآ نگرتم] کی ضرف ایک زیت ےجضور ب یکرمم ٹن کتیرہ )۱٣(‏ اوصاف وکمالا تک بڑے دل ششجان انداز یش بیان فرمایا جوھک اپنے پڑ نے (الین کے ایا نکی شالت کا ذ رق ہیی ا نکیا بک بڑ نے کے بعد امی نہیں بللہ لقن ےک کوئی بدخجب اپنی عیاری اور مکاری سے چرم اور اپ پل و فاسدعقا مرکو اس پر ملین سکرسکمالہیااداروعوام اہلسمت سے عون لگزار س ےک دہ تصرف ال لکنا ب کا خودمطالہفرمائیں بلمہاسے اپے دوست و احباب اپے عزیزد رش دار خی کہ چہاں تک ا کی رسائیخکن ہے وہاں کک ا کنا بکو با ےکی کے عقیٗ و

0 ات

مصعف نے ا سکتا بکودین کے لے وف فکردیا سے اوراس پ اپ اکس یھی دنیاو یک کوترا مکردیا ے لہا اارو ن بھی ا کاب اگ کا نیاوی ٹنم نی رکھا او ا کنا بک ون

متائر ہہ امت یت۷ نے راغ نت تفر رات نے

ادار: ا بات ےمٴلع کرنا ضرو ری سچکتا سے ا کا بکی طباعت 2.0 کے جم موق اوارہ تحقیقات ہرد نے حفو کر لے ہیں لہزاکسی بھی پیلش رءککتبہ ء فرد یا جراعع کو ادار تحقیقات اہاسد تک ات ریگ اجازت کے لن ا سکیا لو مان کے ص7

شا ئ مرن کی اجاز تنڈل- اکا علاء و مشا امت ری ثر ارخر القادرگی مزارشریف مور

ٹ۶ون:6945355

انتیساب

میں اپنی اس کتاب ”البتار“ر, کو مفتی ابن مفتیء فاضل ابن فاضلء محقق ابن محقق شھزادہ حکیم الامّت یعنی

حضرت علامہ مفتیٰ اقندار احمد خان ام ظِلَهُ کی طرف منسوب کرتا ھوں کە جن کے ذوق مطالعه علمی صلاحیتوںء تحقیق کی باریکوں ء دلائل کی وہ ۓ2 ۰ پُختگیوں اور مضبوط علمی گرفت کو دیکھ کر

امام العصرء فرید الّدھرء شیخ العرب والعجمء جامع العلوم الاليه والعاليهہ حاوی الفنون الفروعیّة والا صولیة

الشاہ الامام احمد رضا خان محدّث بریلوی رضی اللہ عله کی یاد تازہ ھوجاتی ھے هم اپنے رب جَل جلال کی بارگاہ میں دعاگو یں کہ

خدائے ڈوالمنن عژّوجل اس چشمەہ فیض رضا سے ٹمام عَالُمْ کو بالعموم اور اھل اسلام کو بالخصو ص تادیر سیراب فرمائے“ امین

بحق ط ویلس نل (ا)"بتَار“حضور سید عالم بت کی تلواروں میں ہے ایک تلوار کا نام ھے. (طیری) -

اس کا معنی ھے قطع کرنے والی“ (زرقانی)

جہی یں ۶ک کوک وک و وی

یاشفیع 2 70 ء۶

بردرت ایں بار باپشتی دوتا آوردہ ام چشم رحمت برکشا موی سفیدِ سن نگر

گرچه از شرمند گی روئے سیاہ آوردہ ام آں نمی گویم کە بودم سالٰہا در راو تو

ہستم آں گمرہ که اکنوں روبراہ آوردہ ام عجز و ہے خویشی و درویشی و دلریشی ودرد

ایں ہمە برد عوئے عشقت گواہ آوردہ ام

دیورەزن کمن نفس وہوا اعدائے دیں

زیں ہمە باسایۂ لطفت پناہ آوردہ ام گرچە روئے معذڈرٹت تکذامۓ کستاخی پر گردہ زبا عذر خواہ آوردہ ام بستہ ام بریکد گر نخلی زخارستان طبع سوئے فردوس بریں سشتی گیاہ آوردہ ام دولت این بس کہ بعد ازمحنت و رنج وراز بر حریم آستانت می نہم روئے نیاز

(مولانا جامیع4)

٠۰

٦ھ‏ 0 شفاعت فرمانے وانے! میں مگمناہول کا بھاری وھ ل ےکر آیا ہ ەل آپ کے در وت کت (مگناہوں سے )یر یکم رجح کگئی ات

۴ رصم تکی گوکھو لک جھ برفظظ ڈانلے اکر چ بش شرسار ہوک (مگناہوں سے )سیا رہ لایا ہی ںگ رتضور مل میرے ان سفید پالو ںکو دئئ_

۳ کت راو نل ےکر نے ہہویۓ نے الما سال لگمزر کے یں ہشن فو دہ پھلگا ہوا ہو کہ اب کن راہ ۔

۴ ما بک ء سی ءنقیری, زخم ول ا ےلت کے نے کے طور پ> ے پر لایا وں۔

۵ شیطان جیما رین اونٹس اور خواہشات فسمانی تی دین کے بشن مر کرات میں یں ان سے غجات پانے کے لے می لپ کے ساب طف وکرم میں ناد لیے حاضر ہوا ہویں۔

چ میریممتائی نے یھ معذدرتکرنے کے تاب ل یں پچھوڑا پچ رکھی مز زخوا کی زان لان ےک متا یکردہا ہوں-

اپے دل کے نارستان بس سے میس نے ایک ہی دا چنا ھت مت 9 9 ا ا ْ

۸ می می ریکل جم گی ھی ےةکہ سے بڑی مضقت اور ملیف اٹاک آپ کے آ ستانے کے مع برنذر لایا ہوں اور سر ناز چھکا رہ ہوں“_

ض ل گیل استاز ]لفضر ہنرو اہسضت ء اہ ررحویات حضرت قبلہ عا مہ بروفیس مر ڈاک مج سو اتر دام ظله (ایم۔اے۔ لی ۔ائجچ یی ۶-۳۶۰۵.-۱۸۸)

بسم الله الرحمن الرحیم نحمدہ ونصلی ونسلم علی رسولە الکریم

عتائر انان ےگگرو خال اور ایما نکی ذیاد میں اکر یڑ سے تو برا انسائیٰ وجودگکڑگیا فور گے تذ پچرا زجووسنو گیا عق دکی روح حضور انل کی عبت او رآ پکیاعلیم وقدقیر ہے تو :ان کلھگ ے محب تکرنے والوں او رآ پگا وکھری مکرنے وامو ں کا ایک طو یل سلسلہ ے او رآ پکا ان می ںمتتاخیا ںبرنے والو ںکا تی ایک طویل سلملہ سے مس کا آغاز عم نو پا پل ے ہو چک تھا اورکتاخ اپنے اخیا مکوک گے جےآپ سے حب ترنے ا كت کا شان بڑھانا جات می ںکہ بب تک فظرت: ہے اودآپ ےگہت کے زوا ےآ نک شا نگکٹانا جا تج می ںکہ بش وعداو تکا فظطرت تب

گتتاخول اور ہے ادلو ںکو جوا د ینا الشدکیا سنت ہے محاب سو لیگ کی سنت سے علاء صلی ری سنت سے پیمیرمس جب بے اداویں نے سراٹھاتے لن یا س۷ ۳ت نے علاء مارح نے تخاقب فزمانا جن مین انام اص رتا حا موی امو نا شائضنئ:مولان مج صن چان علھیم الرحمه یلیل القرعلاء مشارغ تھی ہیں۔

بی تر کے لئ میں نظ رکتاب ”الباز“مولانا حھ سان ارح رضوبی سن ی ضف قادری زیر مجدہ نے َ بن دی سے جوان ے چلال وبا لکا 7 سے ال ل کاب میں انہوں نے ملف اعادی ٹ کب اود دوسریکمالوں سے مندرد بل چا رمس کول ررش ڈالی سے ان امور بر بہت ھا گیا ےر ہو ں کہ بک وا ےھنن ا گے از کا جانا ے اور پار پارمتوج کیا جات سے وف مضماکل ىہ ٹیں۔

نیم تیر لم یب حاضروناظر لورویثر

یہ مسائل ایے می ںک ہآ سالی سے بجھ میس آ کت ہیںائیان ضدیی اور عٹ وعرم کے لے ریت ۳ نشی کی تیم رف ےل می لکن ےم ات ھا دیے ہی ںک ہف رآ نکریم ٹس ہ ےک ہم کبدد بلک میں تم جیما بشرہوں' بینک برقرآن کریم میں گر اصمل بات جک ہک ىہ ہ ےک ہکس ےکہدد؟ کفارشرکلشن سےکیو کہ ودی امیا لیم السلا مکوابنا جیا ہش رکہاککرتے تن ےکی سھالی نے بھی یہ بات نمی کی تو صل میں خطا بکفاد ومشرکین اور یپودو نصارکی سے سے اگ رس یکو ا نکی صمف میس کو نت نے کا وق ہے ا یلک ےآ بیت پڑ ھک متاۓ۔

دوسری باتع غی بک ہے ہہ دوعلم ‏ ےکم جس میں سارے علوم سمائے ہوئے ہیں اللہ نے تضور افو الگ اور اہ برگز ید مرو ںکو یمم سکھایا نے جوم سکھایا جاتا سے ذو سے کے بعد بھی دی یلم رہتا سے بد لنئیس جانا ای لے ىہ بات کیسے ناممتول ہوکتی ہ ےکہ الد تھا لی نے

٢‏ ٢ت‏ چجز

نکش نہیں ہی

را ملہ حاضر و باظ رکا سے بر بھی زیادہ مشکقل نہیں الد تعاٹی نے قرآ نکریم میں وا کو شاہر او رگواہ فر مایا ےگواہ کے لے ضروری ےک جح سکیمگواہی دے اس کے پا موجودگھی ہواور دک بھی رہ ہہونی حاض ربھی ہواور ناظظ بھی اس می ںکیا قباحت سے؟ اب مہ بات الگ درب کہ جماریبجھھ مم شکمی ںآ رسی سے جمار ینہ معیا رنجیل ال بات ىہ ےک اللہ نے فرمایا

شی بات ورو شروا یکھی ایشل کے ہے قرو نک ریم میسن رمیا تا نے پا و رآیا

۰ یت 7 س رر کس ہار یہ میں نہیں ؟ جک محضور افو لی نا ہ ری شحل وصورت اشری ے پچ رو رکسسے ہوڑے؟ بب بات لا ایل سے ۷ یجن ےکی ےک اکا ا کے ات لے )ص۷۸۷۴ کلم نے ت مکی سے پا کیا او بات برک شور ا ےک انا نک می سے رای تی بات کیو ںہ میں 7 گیا؟ اس بر ہکم یکوئی اعتراس مل یی ںآ یا ا کا جواب بی ےک الد تعاٹی نے فرمایا جم نے لق نکیا جب مٹی بر یی نکرلیا تق فور پرچھی یق نکر لین چا سے ورہ اس طرح ملما نکی رہتا ک ای فآ یت بایان لاۓ دوس رکآ یت پ> یمان نہ لا ۓ پر ہہ بات گھی سو ین ےکا ےک ۔ارے اعخترا ضا ت کاتعلی حضور اپ 5 سے ھا امہ محبت فطرت ب‫ ےکی ووست او رگوپ اعترا شکو روا نہیں ری و اعت راخ لکرن عحب تکی علام تی سنفر کی علاصت ہے۔ اں ان لن نک جا: کا ا اور جو اختراضا تمرتے ڈں تہ النا 70۵ جا نہ ملنا جلزا ای کیو ںکدوست وشن دنو ںکی مک ہ ایک ول می سکیس ہداکرکی اللدتھائی ۹ متوصرا تیم بہ چلاے اورتضور انو بل کی جناب میں باادب ر کے اور مرا نکش ٹیس بی ہیں پاادیوں کے ساتھ اٹھاۓے۔آمین اح حجمسورار عفی عله_ (کرا تی ۔سندھ) و صف ملف برا ہیما

موی ماف اکم ای الما تن اہلسمنت ء ری وارلا ق]اء وارالعلوم انوار القادر یرت علامہ سید اگبر :- رضوکی صاحب مت ظل العا لی

بسم الله الرحمن الرحیم الحمد لل ونصلی ونسلم علی رسوله وحبیبه سیدنا ومولانا وطبیبنا وشفیعنا وغوثٹا وغیاثنا غوث الثقلین نبی الحرمین امام القبلتین وسیلتنا فی الدارین محمد واله وصحبه اجمعین

الا بع دک زم القام لزت ماب عالی جناب جخرت موا نامرا رضوکی صاحب دامت پرکاأم لالہ ایک ایے خلیب بیدا مغ مار پاسباں مسلک رضا ج نک ریہ ےہ گار بل ابی عفت ایک سی اداار ےکی مس برائی فرمارے ان کے ہو نھارگی گیا ایک زنر شال ے اللھم زد فزد

بی رر عدریم الثال ہے اور دہ خود بول رہی ہے کے یس ایے جوانوں میس ایک ا سے قواں جم تک یتر ہوں جن کے بادے ٹل عدبیثٹ صاحب لواال ےک ”من یرد الله بہ خحیراً یفقھہ فی الدین“ جس کے ساتھ اللہ پاک بعلائی کا ارادہ فرماتا سے ائ ںکو دین کی نات عطا فرماتا ہے (ہخاری شریف ۱ص ۷) اددج٘س کے بارے مں یعدیث ےک ”فقیہ واحد اشد علی الشیطان من الف عابد“ ایک پت خٍطان برار عاباوںل سے اذہ ماری ہے زی سللۃ مس ۳2)سوکمال اعقیاط سے ان حیطالی ع ہو کا جواب دا سے جن کا رہ سرکار افکرس بی رعت سید عالم فورجسم نیراعم ماہبا پگ نے اس رح بے نقاب فر مایا ےک ”من افتیٰ بغیر علم لعنة ملائکة السماء والا رض“ کہ جس نے مغ رعم فی دیا اس پر آ مان اود زین کے فر یت اعضتکرتے ہیں (کنز الال ج اش )اور ای ظرئ ہے وارد ےک “اتخذ الناس روسًا جھالا فسٹلوا فافتوا بغیرعلم فضلوا و اضلوا“ قرب قیامت میں لیک چابلو ںکوسردار بنا یل گے پچ ران سےسوا لکیا جائگا تذ وف ئی دمیں گےعلم کے بغی رق خور راہ ہوں گے اور(لوگو کو مگمرا وک میں گے (شلق عا سوہ ص۴ تة ولیک جیوں نے رسورخ اعلم نہ پایا اود شیطانی آل ہار بی نکر خودگزائی س ےگہر ےگڑ ھھ میں گے ذذ دوسرول کی

راد کا اما نکیا اد ایک غلق تکواپے دا ول وفریب می گرا رکا سے لوک ںک کرای ک نت یک اورتر رکا ىہ دا شکن جواب ہے اور نکو جواب دنا متصود ہے جن لوگوں نے اس ذات اق ںکونشانہ بنایا جج نکی محبت اور اہی حب تکا معیار خداوند تعالیٰ نے ایک دی راد دیا اور ریا کہ ”قل ان کان اباء کم و ابناء کم واخوانکم وازواجکم وعشیر تکم واموال اقترفتموھا وتجارۃتخشون کسادھا و مسکن ترضونھا احب الیکم من الله ورسوله وجھافی سبیلە فتربصوا حتی یاتی اللہ باامرہ والله لایھدی القوم الفاسقین” تم فرما اگ رتمہارے پاپ اورتمہارے اورتمہارے بھائی او رت ہار عور٘ی او رتہاراکئہہ اور تار کمائی کے مال اور وو سوداجس کے نقصان کا میں ڈر سے اورتمہارے بین رکا مکالنا سے زس اللہ اور ا گے رسول گرا می ) اود ا کی راہ یں لڑنے سے زیادہ پیاریا ہوں و راس یھو یہا لم کک الد اینا 4 لا ۓ (الت ۴٣ت‏ ج کنزال بیان) اور جل رآ نے وانے عزاپ شی با کرے (خزائن العرفان )اور خداورسول کی حبت ایمان کا دحل سے (این) عح ت کگر ونظر مل انقلاب پیداکرد تی سے مہ انقلاب پیا نہ ہو نو انام ددا بوتاےے جو انیس کا ہوا بحم میں بر ای ککواٹ یکر ون رکی تفاع تک رکی ہوگی۔

کوئی لان انیا لیم السلا مکوئضس ایک انان از کے یی بے ما یوں 003( وخیال ائٹٹ کا کے یور و تصاری کا ے او رکفار وش ران کا کے چنا نچ اللہ اٹ 2) کے ”قالوا ان انتم الا بشر مٹلنا“ لگ ےم تق ہہارے تیآ دمی ہو (ابرائیم٭٭ا تر جم ہکنزالایمان) الما ہی سورہ ایا مرن یں تل اب صلمان ال راہ کنا ر کش ہو اورت والفت رسول پل کی راہ انا اور ا نکیٰشن|یم ٹیس حد در کوشا ں ہو۔

ال دکریم نے فر یا کہ ”لتو منوا باللہ ورسولە وتعزروہ وتوقروہ“ کہ اے لوگوتم الد اور ان کے ول پراییان لاق اود سو لک الیم تر ہے عکرد (0 تر ملمانو ںکو یے عنم وق کرنے ک کم گر (لحض )لوگوں نے اس لٹرگر(اورشچ عقیرے) کی نشرد اشاعت کے لئے

تی کی مین لیم دی پل کا باب پا اک ل نتم ہوجاتا ہے چنا لھا ”بمقتضائے ظلمات بعضھا فوق بعض“ ازو سوسء زنا خیاإ ل مجامعت زوجە خود بہتر است وصرف ہمت بسوئے شیخ ۵ 2ه]ِ0)0 از معظمین کک جناب رسالت ماب باشندے بچندین مرتبە بدتراز استغراؾ در صورت گاؤ خر خوداسہت“ ایی نللات بحضہی زی ہق رک ضا ات زا کے سر نے ای و امت کا خیال پبتر ہے اود اپتی فوجہ پچ کی طرف قالی اور در ان عفرا کی طرف اگانی جو یتم کے قائل ہیں چاسے جناب رسو لگراک یپ ہوں ببت زیادہ ان مد ھھ او رگا تیل کے خیال بیس ڈودبنے سے براے“ پت تارج رش دنت نےکآم اٹ اکم ایک شا دکار تر ٹن کی سے اور اپ ؟ تا ومول مرمعطلظ پل یلیم دق ڈول ہوٹی لیک و رر منظرعام پ لاۓ ہیں دوضلیم جوقر ن و حدریٹ سے حاصل سے اور آ پککی فت کا نے مال مکہ راز خلوق نآ پا نل اود رکزیدہ ہیں کپ کےآباء ام پک حا تکاشم+آپ سے شر تھی ں کا تم *آپ کے اغلاتی عالی ہکا ذک رآ پک اد تکر ی3ک آپ کےملم ول کا بین آ پکیا رت عا کا ان آ پک اخ ہارے عال مککائی دشائی ہ ےآ پک نبوت و رسالت قیامت تک سے رسول انگ ملمانو ںکی رگ جن سے زیادہٹریب ہیں اود مقا مگمودکی بثارت آپ کے لے اور اللد پا ککی طرف سے درودوعلام ےار ےپ سے بین ان شال تو اذ تن بایان نک لے سے اود ہمارے لے ان جیانات یں ہرایت نمیم ہے اىی ہدایت او تی مکو واضل مصیف مسلرانوں کے دل ود ما یش اجار دینا جات ہیں۔ ۱ اور ران پا کک ینیم یہ ہےکہرسو لگرائیت کو نا لیک نہ پکارد ان سے رق بھی جیز تہ رکھ وآ پ کادر دوات بھانا لٗ و رکمار وا ڑ کک تہ رو ار ازداع مبرات سے بیگھ ینا ہوت

پردے کے یی سےلو ج بآ پمفتگوفرمامیں فو فہابیت توجہ سےکان لا کر سو اکر رسول ٹہ کی آواز ےآ واز بلن کی تو اعمال بہاد ہوجاتیں گے اور جب ؟ پ ہلائیں تو فؤزا عاض رہوچا٤‏ جا ےت نماز یل بی کیوں نہ ہو۔

وی صدئی ججری سے ل ےک ر1 نج تک جس قد رکا ہی تک یگئیں دہ تھا یم نکی کا در دی ہ ںکہیں 0" ہے و کافروں میس ممرکوں می بہودیوں یں بت پجاریوں ٹش سے اب وچ لی متا ہے الواہ بمتا ےحسرو پر گنا ہے نید یکذاب وگ تا ہے خلام قادیالی کستائغ ےعٹیل (یٹھو یکمتاخغ سے رش دگنگود یکتاخ سے اسایل دھلو انکر می سکمتا خی سے انی تھانو متاخ سے رشدکیممتاغ ےکسلیرہ ری کتاغ ہےگمتازغ رسول کافر ۓےکاٹر ےکافر ے(کما نص علیہ العلماء الکرام من العرب والعجم)ال ےیل ب کر معنف مدوع نے مگمتاخمانہ عبارات کا بردہ چا کیا سے مولی تعالیٰ مصنف کیکوشل اور کا شکودرجرقبولیت عطافرماۓ مزید ھی جواہر پارے بھیرن ےکی فقی عطا فمرماے ۔آمین

بجاہ النبی الامین صلی اللہ عليه واله وصحبه وعترتہ وعلماء ملتهِ ومشائخ

طریقتِ اجمعین

سیر اکپبرئشنی رضوبی

ین

عا انیل اخ یل ابلسدت سادا جاج الشریر تن الاسلام خ٤‏ ور ملتی مھ اخ رضا خان اڑھبی تقادری و حضرت پزالعلوم مفتی عبداسنان پشھی شع لیر یٹ جامعہ وت اعلو مکھڑی انڑیا) وریز مات یتقق سال جر ید مفتقی نظام الد ین رضدکی (رس دارالا فء جامعہ اش فی مبارکپور انڈیا) رت علامہمفق ابو البرکات مغ قب ات القادری دام لہ

نحمدہ ونصلی علی رسولە الکریم

طز یقن وحب سید الگوشن روں دی نھی ہے اور معیار ایما نی بی اہنع ے جوم وی نکی جا قیامت رجبمائ یر ی رےگی ا دور ٹیش ج بک یجنفس ش ند اور بے دن عاصر حجی بکجزریا عليہ التحیة والشناء کے فضال و ا خقیارات کا الگا رکر کے معاذ الا نٹ کی عفم تکوقلوب سے مٹانا جا نے ہیں اس ام رک اشدضرورت ےک فرقہ ناجیہ مل کم اہلمنت والجراعت ک ےمم نفی نلم وق رطاس کے ماذ پر اٹ یتیوں کے ذرلیہن میں “نٹ کی پاسدارق اورعتقیدر دج کی ا بیاری فرماتیٍں- ۱

گرائی فر رحخرت مولانا حر سراجع رقموکی زید مجدہ نے ای فریضہکوس انام دیے کے لے ”البعار“ کے نام سے سی فرماکئی میں ریم الفتی کے سجب پالا ستیحاب مطالحہ سے تاص رر پا صرف چنزصفیات د کے الوب میں حجار ت اوردلال بی قوت ہے اللدتبارک و تھاٹی ا نکی ال سج یی لکوقبول فرماۓ اورقجوایت عامہ سے سرفراز فر مائۓے ابو الب رکات تم خا قب اترٌ القادری

او الاق]ء (مرکز العلوم اسلا مرا پتی)

خطیب اہلمدت ملغ اسلامء عالم پال ححضرت علامہسیدمز +یلی تقادرکی مرن لہ العالی البتار بعون العزیز الجبار علی الرقاب الاغیار فی الشان النبی المختار سراج الاقعدار فی الملک الابرار طالب الفیض حمزہ غفرلہ الغفار ات و1200 .1 اس و ہے ا لو کے ا ا ات ات 7 00ت ا ا رایت

غ و اعد مات ۶۹۶۷ ) دی قادری

ےر الف ٤ھ‏

٢‏ ای ۰۰۰۳ء۲

0

دنین لکنا رز بسم اللہ الرحمن الرحیم

نحمدہ ونصلی ونسلم علی حبیبه خیر الانام وعلی الہ العظام واصحابه الکرام

جانا چا کرک کی یں او کی ےدک ںی سی ماف مان ای کے قب روغض ب کا ختزارکی ں کوکش ارم سے

گر ہق رآآن و اعادی ٹ کا مطالعہ ذرامگہرکی نظر ےکر ہیں ذ ہم پہ ىہ بات عیاں ہوجالٰ ےک ہایس سے زیادوکوئی بھی ناف مان الل کی لت اور اس کے عذا ب کا شح نی ںآ پ جار کا مطائ دکر کے دک لیس آپ پر مہ ای طر واس ہوجائ گا کہا دروتے زین پہ اللدتعالٰ کے بڑے بے ہاگ اور ناف ما نگمزرے ہیں نیے نمرو اما نقاروںن ابو تل الو اہب اور فرکون, ان می آ پ فرون ہی کین مکی ادلی سی شال ملاحظہف ما می کہ اس نے متر جرارشیر خوار بیو ںکوؤ ںکرایا دم رہظا مکا ذکر ہت قکیا۔

فرل کہ پڑے بڑے الم اورمشر کک رے ہیں مان اس کے باوجود سب سے بڑے ناف مان ٰ۷ و

)یں ین

27

یقبا ٹر کک وجہ ے ایا ہوا ہوگا؟

یہیں!

اس می نکوئی یح ک نی سک شرک سب سے بڑا جم اورشرک سب سے ڑا مج کن 4 ۶ئ 99۲‌"‏ ۶ "88۳ "×× ۴ لت رک ت61 نان کے ای جر مکوت رآ ن نے لیں با نگیا-

کے .ےت ناس (اٹسں) 07 بی کاٹروں 02

(عورہ گ٢‏ یت ٥ء)‏ اس کا مب راورخرو رکیا تھا؟ وہ یی تھا کہ اسے حضر تآ<م علیہ السا مک نع لیم بالا ےکا 7 0870 سے اہک کردا اور کسی اکار ا لسکیلئ الد کے ق روغضب اور لع تکا ذرنچٹرار پایا۔ اں ۓحضر تآ یم علیہ ااسلا مٹیم نکرن ےکی وہ پیھ کی تو اس نے اد آنا عَيْر مَنهُء عَلقْعيیْ مِنْ نَارِوٌ عَلقْعَه مِنْ طِیْن ایس سے مھتزرہوں تو نے بجھےآگک سے بنایا اور ا ےی کے پا گیا (سورو گآ ت۱ء) ےکہنا اک غدا کے روغب نے ا ںکا سب بح بادکر کے رھ دا اور عم اک فَاخْرُج مِنْهَا فَِنَكَ رَجِیْمْہ وَاِنَ عَلَيِكَ لع لی يَوم الكَینِ٥‏ ٭و (جت سے ) نل جا ک2 ران ھا گیا اور نے یک تچ بر می رىی للعنت سے قام تک : (عورو لآ یا ت۸>-ےءے) ذرا تو تف کے ! اور تاب ےک اش سکس بات نے ب با دکیا؟ ای بات یی کے ری ےی ےا ۷۹۷۵ َ)ٰ"٘ یھ" کیا بأت ورم تن لکن تق ت حطر تآ دم علیہ السلا می سے اور ا ےآ گ سے پا کیا گیا؟ کیو ںکئیں.....! اس می سکوئی تر ددکیا بی نھیں جا سکتا حر تآ دم علیہ السلا مم ی "0 20 ا ما

ہت

ىك

ق پچمردوکو نکی دجنش یکا چپ کے انظمار نے الس کا سب چو ملیامی کر کے درک دیا؟

این ےکن نے کی یگ کی نے یں کم بات کت مز یے جس با نکیا اود رب کائحات جویم بزات ااصدور سے اسے اشی کی 90ص ظ9 آئی کہا نے اس حکو اف ین نیو کیل بنایا ہنا ای سکواسی ہچ نے برہا وکیا معلوم ہوا مکی ان می سکوئی بی با تب یتحقی رآ می زانداز یم لگی جا نے دہ بی با تکھا بندر ےکا سب یھ لیا میٹ کر کے رھد سے

ال مقام بر آکر ےم برمفگبر اورییوں بر مفرورمولو یں کا ھی خمار ات جانا جا کے اور ففلت سے ؟کگل جانا چا ہے جوق رن داعادیٹ کا بیان بی فیک رسمالمت“ گیل خکرتے ہیں اورمنبروں پر بیٹےکر ٹچ کرلوکو ںکو بھی اث دپے ہی کہم ج ھکد ہے ہیں اود جھ رر ہیں ہین و حی رکا سان اورک ای ے اور جہمارا ىہ وعنظ نصرف مفیقت بمعنی سے 5 ین ق رآ ن وحر یٹ بی ے اور ہم عقیدة فو مد کے محافظہ اور ج ت جمان ہیں۔

یرلیگ ابی ان کلواسسا ‏ تکو گج یکیں بہرعال خدا سے پچ بھی پیشید ونیک ہآیا ا ن کا ہے طرزکل عقیرۃ نحید کے بیا نکیل سے پا رات ال ادڈرپالٹنوش تضورسی رکا کی خظمت و حم تک خراقی اڑان لئے ہے۔

وس کیا جار ہا تھا ائٹس نے حضرت ک1 وم علیہ السلا مکی خطحنت پ حمل ہآ ود ہون ےگا کش کی مین خود انا آ پ بھی جلاک و بر بادکر کے بیٹھگیا-

۳پ و جال لوکوں کی طرح گائؤوں گائؤوں' شبرش رگ رگ گر گر بستز اٹراۓ آ وار ہممدیعو کی رح پچھرکر سید سے ساد ھھ لوگو ںکواپنے دام یں بپحض اکر اپیے دی میں لاک تہ یٹھا تا تھا یہ ا کیا دی نے اور وع ک یپفل میں فرش اپنی رک تکوسعادت سکم تی ں کھت سے اس سےعلم وفنل نے اے فرشتو ں کا استاد بناڈالا تھا

ال ںکا بجی زم فاسد تھا کہ جب میر یگ رکا فزشتوں میں ےکول یھی تو پچ ری سے پیا

۷۷۹0/70٦

ئے گی ےآ د مک یکیا حثیت ؟ معاذ الله

اں بد بت نے حخرت ؟ دم علیہ السلام گا شریت برنظری اور آ پ کی عظلت سے ہیں ہن دکیں تو مارالگیا اہ ہوگیا مھ باد ہوگیالضقی اور مردددقرار بای بھیشہ ہش کی -

ححفرت؟ دم علیہ السلا مکیلن ٹیس ایک یرہ نہکرنے ب یک وجہ سے ا کی لاکھوں بی کی عبات و ریاض تگروڑول' ار پوں رو ںکو علیامی کر کے رکھ دیاگیا نم مت زنک اج ا سکی تا فلس اورعہرے اس سے گجین لیے مکی نے تچ کہا ےک

7098 ۹ "" ہہ جرار'رتے ٣دت‏ ے ادمی کا نات

اس بھی بجی ذئین بنایا تھا کہ یس نے ذکروڑوں' اربوں یرے خافی کاتنات کے تضور ادا سیئے ہی ںآ رج 1 د مکیلع می را سرجچوکاناکوٹی ضردریکیں-

گر مس خی بن نک کی علم بک ”ونیم ہے“ ہی متبولیت اورغزدودی تک سے سو اور پا نہمر کیا جاچکا ہے۔

رع س بک عبادت و ریاضت ایمان و اعمال کے مقبول اور نا متبول ہونے کا پہلا اور آخری دن ھا۔

قرآ نکر اس بات پگواہ ‏ ےک عبادت و ریا ضت اٹچی کی قبول ہہوٹی اور ابد کے قرو غحضب ے وب یتفوظط و مامون بہوت ۓےکجنہوں نے برح الد کے ناب اور دوس کوسد ٥کیا‏ اور عبادت و ریاضت ایمان داعمال ای کے بر باد ہوۓ اور ا"د کے ق روخغحضب کا شکار ہوک پھیشہ ہی کیلع ملتون ومرددد وت یکھ ہرانک جس نےعظیم